44

گزارش ہے کہ ۔۔۔۔۔۔ تحریر :ماہم فرح

گزارش ہے کہ ۔۔۔۔۔۔
تحریر :ماہم فرح
بے شک صفائی نصف ایمان ہے ۔ ہمارا مذہب صاف ستھرا رہنے کو بھی ایمان کا حصہ قرار دیتا ہے۔ جس سے صفائی کی اہمیت کا اندازہ لگایا جا سکتا ہے ۔ صفائی کا خیال رکھنا صرف انسان کی ذات تک ہی محدود نہیں ہے بلکہ اس میں انسان کے ارد گرد کا ماحول بھی شامل ہے ۔ جس پر توجہ دینا انسان کے لئے اتنا ہی ضروری ہے جتنا کہ خود کو صاف رکھنا ۔انسان جس گھر، گلی ، محلے ، شہر سے تعلق رکھتا ہے اس کے لئے ضروری ہے کہ وہ ان کی صفائی کا بھی خیال رکھے۔اور جب بات ہو شہروں میں صفائی کہ ناقص انتظامات کی تو اداروں کے ساتھ ساتھ عوام کا بھی فرض ہے کہ وہ اداروں سے تعاون کر یں چلتی گاڑیوں سے کوڑا باہر پھینک دینا ، کوڑا لفافوں میں ڈال کر گھروں سے باہر پھینک دینا جہاں خالی میدان دیکھا اسی کو کوڑے کا گھر بنا دینا تو ہمارے لئے عام سی باتیں ہیں ہم یہ سب کرنے سے پہلے اتنا بھی نہیں سوچتے کہ ہم اس بد تہذیبی کا مظاہرہ کر کے اپنے شہر کی خوبصورتی کو ہی ماند کر رہے ہیں ہر غلطی کا ذمہ دارحکومت کو ٹھرانا بھی درست نہیں ہے کیونکہ جو کام ہمارے بس میں ہوں ان پر توجہ دینا ہم پر بھی فرض ہے۔ راولپنڈی کی صاف صفائی کا موازنہ اگر دیگر شہروں سے کیا جائے تو بے شک بہتر نتائج ہی سامنے آیءں گے ۔
راولپنڈی ویسٹ مینجمنٹ ایک ایسا ادارہ ہے جو طویل عرصے سے شہر میں صفائی کے انتظامات سنبھال رہا ہے۔ یہ ادارہ ۲۰۱۳ کے نصف سے شروع کیا گیا تھا۔ یہ ادارہ موثر طریقے سے شہریوں کی صفائی اور حفظان صحت کی ضروریات کو پورا کرنے میں ہمیشہ کوشاں رہا ہے۔

راولپنڈی ویسٹ مینجمنٹ کی جانب سے شہر بھر میں کوڑا دان رکھے گئے ہیں جن میں دن بھر کوڑا کرکٹ پھینکا جاتا ہے اور روزمرہ کے معمول کے مطابق رات کے وقت کوڑا دانوں کو خالی کر کہ کوڑاکرکٹ ٹھکانے لگا دیا جاتا ہے۔ اگر یہ کوڑا دان نہ ہوں تو شہر بھر کی سڑکوں ، کھلے میدانوں اور پارکوں میں آپ کو کوڑے کے ڈھیر ہی نظر آئیں ۔ بے شک شہر کی صفائی کو ملحوز خاطر رکھ کرانتظامیہ نے یہ بہترین اقدامات کئے ہیں مگر پھر بھی انتظامیہ اپنے فرائض صحیح طریقے سے انجام دینے سے قاصر ہے ۔
کسی کی زرا سی لاپرواہی یا بے احتیاطی دوسرے کے لئے جان لیوا بھی ثابت ہو سکتی ہے ۔ راولپنڈی ویسٹ مینجمنٹ کی جانب سے شہر بھر میں رکھے گئے کوڑے دان کئی حادثات کا موجب بھی بن چکے ہیں۔روز مرہ کے ٹریفک حادثات میں لقمیٰ اجل بننے والوں سے ہم اظہار ہمدردی تو کرتے ہیں مگر ان حادثات کی وجوہات کو درست کرنے کی کوشش نہیں کرتے ۔ ہمارے نزدیک اب یہ سب معمولی باتیں ہیں۔
راولپنڈی ویسٹ مینجنٹ کی جانب سے رکھے گئے کوڑا دانوں سے معمول کے مطابق دن بھر جمع ہونے والا کوڑا رات کے وقت وہاں سے ہٹا دیا جاتا ہے ۔ کوڑا دانوں سے کوڑا نکالنے کے بعد انہیں بیچ سڑک رات کی تاریکی میں رکھ دیا جاتا ہے۔ اب اس سے چاہے کسی کی جان چلی جائے ادارے کا کیا جاتا ہے ۔ کیونکہ ان کے نزدیک ان کا فرض محض صفائی کا خیال رکھنا ہے ۔راولپنڈی میں کئی افراد اس وجہ سے حادثات کا شکار ہو چکے ہیں تاہم راولپنڈی ویسٹ مینجمنٹ سے گزارش ہے کہ وہ اس بات کو تسلیم کر لیں کہ کوڑا دانوں کو مناسب جگہ پر رکھنا بھی ان کے فرائض ہی میں شامل ہے تاکہ مستقبل میں اس قسم کے حادثات سے بچا جا سکے۔

Facebook Comments

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں