91

دار العلوم دیوبند نے فیس بک یا سوشل میڈیا پر تصاویر اپ لوڈ کرنے کو غیر اسلامی فعل قرار دے دیا

دار العلوم دیوبند نے فیس بک یا سوشل میڈیا پر تصاویر اپ لوڈ کرنے کو غیر اسلامی فعل قرار دے دیا دارالعلوم دیوبند نے تفصیلات میں‌بتایا کہ ایک شخص نے سوال پوچھا تھا کہ وہ اپنی یا اپنی بیوی کی تصاویر سوشل میڈیا یا واٹس اپ پر شئیر کر سکتا ہے جس کے جواب میں دار العلوم دیوبند انڈیا نے فتویٰ جاری کرتے ہوئے کہا کہ تصاویر بغیر ضرورت کے بنوانا غیر شرعی فعل ہے جس کی اسلام اجازت نہیں دیتا
ساتھ ہی فتویٰ‌میں کہا گیا ہے کہ اسلام عورت کو اجازت نہیں دیتا بناو سنگھار کی کسی غیر مرد کے لئے پلکوں کو تراش خراش کو بھی غیر شرعی فعل قرار دیا گیا ہے
جبکہ دوسری طرف بہت ساری عورتوں نے اس فتویٰ‌ کو منانے سے انکار کر دیا ہے صوفیہ احمد نے کہا کہ جب گلف میں عورتوں کو کار چلانے کی اجازت دے دی گئی ہے اور دنیا بہت تیزی سے تبدیل ہو رہی ہے تو پتہ نہیں‌کیوں ہمارے مولانا پلکوں کی تراش خراش پر فتوے جاری کر رہے ہیں
جبکہ ایک خاتون نے کہا ہے کہ فتوے میں لکھا ہوا ہے مسلم مرد داڑھی رکھیں مجھے دکھائیں کتنے مرد انڈیا میں داڑھی رکھتے ہیں

Facebook Comments

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں